Voice of Khyber Pakhtunkhwa
Friday, September 30, 2022

کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ مذاکرات ،افغان طالبان کا کردار

تحریر حیات اللہ محسود

 15اگست کو طالبان کے کابل پر قبضے کے بعد پاکستانی حکام نے مطلوب ترین شدت پسندوں کی ایک فہرست طالبان قیادت کے حوالے کی اور ان کو  پاکستان کے حوالے کرنے کا مطالبہ کیا۔ ذرائع کے مطابق پاکستان کے اس مطالبے پر طالبان قیادت کی طرف سے ایک تجویز دی گئی کہ پاکستانی حکومت کالعدم تحریک طالبان پاکستان اور اس سے وابستہ دیگر گروپوں کے ساتھ مذاکرات کرے۔ مذاکرات میں افغان طالبان نے ثالث کا کردار ادا کرنے کی تجویز بھی دی تھی جس پر عمل کرتے ہوئے پاکستان حکومت نے باقاعدہ طور پر مذاکرات کا عمل شروع کر دیا اور افغان طالبان کو مذاکرات کے عمل میں ثالث کے کردار ادا کرنےپر اتفاق کیا ۔اب تک مذاکرات کے عمل میں خاطر خواہ پیش رفت ہوئی  اور زرائع کے مطابق اس حوالے سے کالعدم ٹی ٹی پی اور حکومت پاکستان کے درمیان کئی نشستیں ہوئی اور بالاخر حکومت اور کالعدم تحریک طالبان کی طرف سے گزشتہ دنوں باقاعدہ طور پر اس بات کی تصدیق کی گئی  ۔

وفاقی وزیر  فواد چوہدری نے گزشتہ دنوں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ کالعدم تحریک طالبان کے ساتھ مذاکرات قانون اور آئین کے دائرے میں ہوںگے  اورحکومت کسی کے ساتھ بھی دائمی جنگ نہیں چاہتی ہے ۔اس جنگ میں سب سے ذیادہ زخم پاک آرمی نے کھائے اور قبائلی عوام کو بھی اس جنگ کی وجہ سے کافی نقصان کا سامنا رہا ۔مذاکرات کے عمل میں مقامی لوگوں کو شامل کیا گیا ہے

جبکہ کالعدم تحریک طالبان کے ترجمان خراسانی نے بھی گزشتہ دنوں  نامعلوم مقام سے ایک پریس ریلیز جاری کرتے ہوئے کہا تھاکہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان چونکہ پاکستانی قوم سے ہی بنی ایک اسلامی جہادی تحریک ہے، اس لیئے وہ ہمیشہ دیگر اہم مسائل کے ساتھ ساتھ قومی مفاد کو بھی مد نظر رکھتی ہے ـ یہ حقیقت ہے کہ مذاکرات جنگ کا حصہ ہیں اور دنیا کی کوئی طاقت اسکا انکار نہیں کرسکتی، لہذا تحریک طالبان پاکستان ایسے مذاکرات کیلئے تیار ہے جس سے ملک بھر میں دیرپا امن قائم ہوسکے اور ہمارے پاکستانیوں کو ایک طرف امن کی بہاریں میسر ہوں اور دوسری طرف پاکستان کے حصول کا مقصد بھی حاصل ہوسکے  ۔اعلامیہ میں انھوں نے مذاکرات کے نکات کو بھی واضح کیا تھا جس میں انھوں نے مذاکرات کے لیے کمیٹی بنانے ایک ماہ کے لیے فائربندی کرنے کا اعلان بھی کیا تھا اور ضرورت پڑھنے پر فائربندی کے عمل کو مزید بڑھانے کا اعلان بھی کیا ۔خراسانی کے مطابق مذاکرات میں امارت اسلامی افغانستان ثالث کا کر دادر ادا کررہا ہے ۔

جبکہ دوسری جانب پاکستان پیلز پارٹی کے چیرمین بلاول بھٹوں زرداری نے کالعدم تحریک طالبان کے ساتھ حکومتی مذاکرات پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پارلیمنٹ کو اعتماد میں لیے بغیر ہم ان لوگوں کے ساتھ مذاکرات کیسے کر سکتے ہے جنہوں نے ہمارے آرمی کے جوانوں اور بچوں کو شہید کیا اور ہمارے عوامی لیڈر کو شہید کیا ۔بلاول بھٹو کی اس بات سے یہ اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ وہ مذاکرات کے عمل سے ناخوش ہیں کیونکہ انکی والدہ پیپلز پارٹی کی چیرمین بے نظیر بھٹو پر حملے کی ذمہ داری کالعدم تحریک طالبان نے قبول کی تھی۔

 بے نظیر قتل کیس کاذکر  باقاعدہ طور پر کالعدم تحریک طالبان کے امیر مفتی نورولی نے اپنی کتاب میں بھی کیا تھا جس میں حملے کی منصوبہ بندی سمیت حملے میں ملوث اہلکاروں کے ناموں کا ذکر بھی کیا تھا ۔شاید یہی وجہ ہو کہ بلاول بھٹو کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ مذاکرات کے حامی نہ ہوں  ۔مذاکرات کے عمل کو آگے بڑھانے کے لیے حکومت نے بھی اور کالعدم تحریک طالبان نے جنگ بندی کے اعلان کے ساتھ ساتھ کالعدم تحریک طالبان کے امیر مفتی نور ولی نے باقاعدہ طور پر اپنے جنگجووں کو فائربندی کا حکم نامہ بھی جاری کر دیا جو کہ سوشل میڈیاپر بھی گردش کر رہا ہے ۔ زرائع کیمطابق کالعدم ٹی ٹی پی میں شامل ہونے والے جماعت الاحرار سمیت دیگر کئی تنظیموں کے ذمہ داران مذاکرات کے اس عمل سے خوش دیکھائی نہیں دے رہے اور کسی بھی صورت پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے حق میں نہیں ہیں۔اسی طرح داعش بھی کالعدم ٹی ٹی پی اور حکومت کے درمیان مذاکرات کو ناکام بنانے کی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے جس کی ایک کڑی گزشتہ دنوں باجوڑ میں پولیس فورس پر حملہ  ہے جس میں دو پولیس اہلکار شہید ہوئے تھے اور اس حملے کی ذمہ داری داعش نے قبول کی تھی ۔

مذاکرات کی باتیں میڈیا پر آنے کے بعد قبائلی اضلاع اور بالخصوص جنوبی وزیرستان جو کہ اپریشن سے پہلے ٹی ٹی پی کا گڑھ تصور کیا جاتا تھا یہاں پر بھی مختلف رائے سامنے آ رہی ہے کچھ لوگ مذاکرات کی کامیابی کے خواہاں ہیں ان کا دعویٰ ہے کہ اگر امریکہ افغان طالبانوں کے ساتھ مذاکرات کر سکتی ہے تو پاکستان پاکستانی طالبانوں کے ساتھ اگر مذاکرات کریں تو ان میں کیا حرج ہے جبکہ اسکے ساتھ ساتھ کچھ لوگ مذاکرات پر یہ سوالات بھی اٹھا رہے ہیں کہ کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ اگر حکومت نے مذاکرات کرنے تھے تو یہ پہلے کیوں نہیں کئے اگر پہلے کرتے تو اتنے نقصان کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔ اب ٹی ٹی پی کے ساتھ مذاکرات کرنا ان تمام قربانیوں اور نقصانات پر پانی پھیرنا ہے جوکہ ٹی ٹی پی کیخلاف جنگ میں حکومت اور قبائلی عوام نے دی ہیں ۔

 مذاکرات ناکام ہونے کی صورت میں ثالث کا کردار ادا کرنے والے افغان طالبان کیا کردار ادا کریں گے آیا وہ کالعدم ٹی ٹی پی کو افغانستان سے ملک بدر کرینگے یا پھر انکی پشت پر کھڑے ہوکر پاکستان کے ساتھ دشمنی مول لیں گے  اس بارے میں کچھ کہنا قبل ازوقت ہوگا لیکن کابل میں موجود پاکستانی سفیر نے اس حوالے سے  دعویٰ کیا تھا کہ اگر حکومت پاکستان اورکالعدم تحریک طالبان پاکستان کے درمیان مذاکرات ناکام ہوئے تو مذاکرات میں ثالث کا کردار ادا کرنے والے افغان طالبان ان کے خلاف آپریشن کریں گے لیکن دوسری جانب افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے پریس کانفرنس میں ایک سوال کے جواب میں تحریک طالبان پاکستان کے خلاف آپریشن کی تردید کی ۔اسکے ساتھ ساتھ طالبان زرائع کا دعویٰ ہے کالعدم ٹی ٹی پی کو افغان طالبان نے اس شرط پر مذاکرات کے لیے راضی کیا کہ اگر پاکستانی حکومت نے مذاکرات کے عمل میں سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کیا تو وہ کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ کھڑے ہونگے ۔

About the author

Leave a Comment

Add a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Shopping Basket